Tuesday, October 18, 2016

Confidence vs Fear

When confidence is high, then fear goes to low 

Source:  https://goo.gl/images/g8upDV

Saturday, October 15, 2016

Samoosa Vala

In Delhi, there was a Samosa vendor. His shop was in front of a Big company. His Samosa was so tasty.! Most of the employees use to eat that samosa at lunch time.
One day, a Manager came to that samosa wala. while he was eating samosa he comes in the fun mood.
he asks a question – Yaar you have maintained your shop so nicely.
you have good management skills. don’t you think that you are wasting your talent and time by selling just Samosas?
Think, if you were working like me in any big company. you would have been a manager like me isn’t ?
Poor samosa wala… he smiled at the manager and said awesome lines.
Sir, I thought my work is better than your work. do u know why?
10 years back I used to sell samosa in tokari (Leaf basket). At same time you got this job. That time I was earning Rs. 1,000 in a month and your salary was 10K.
In this 10 years of journey, we did progress a lot.
I owned a shop and became famous samosa-wala in this area and you became a manager.
Now you are earning Rs. 1 lakh while I am earning the same and sometimes more than you. So surely, I can say that my work is better than yours.
it’s because of my kids future.
Let me explain –
Please pay close attention to my word. I started my career at lowest income. my son doesn’t have to suffer the same. One day my son will take over my business. He doesn’t have to start from 0. He will get fully established business, but in your case, the benefits will be taken by your boss kids, not by your kids.
you can not offer your same post to your son /daughter. They have to start from 0. Whatever you have suffered 10 years ago, your kids have to suffer the same.
My son will extend my business from now and when your kid will be manager my son will be far away.
Now tell me who is wasting the Talent and Time.
Manager gave Rs.50 for two samosa’s and he didn’t speak any word and left.
Good Lesson to become Entrepreneur

Friday, October 14, 2016

جہاں تک کام چلتا ہو غذا سے

یہ نظم آج سے پچاس سال قبل راندھیر (بھارت) کے ایک حکیم صاحب نے کہی تھی ، جو شاعر بھی تھے...

جہاں تک کام چلتا ہو غذا سے
وہاں تک چاہیے بچنا دوا سے

اگر خوں کم بنے، بلغم زیادہ
تو کھا گاجر، چنے ، شلغم زیادہ

جگر کے بل پہ ہے انسان جیتا
اگر ضعف جگر ہے کھا پپیتا

جگر میں ہو اگر گرمی کا احساس
مربّہ آملہ کھا یا انناس

اگر ہوتی ہے معدہ میں گرانی
تو پی لی سونف یا ادرک کا پانی

تھکن سے ہوں اگر عضلات ڈھیلے
تو فوراََ دودھ گرما گرم پی لے

جو دکھتا ہو گلا نزلے کے مارے
تو کر نمکین پانی کے غرارے

اگر ہو درد سے دانتوں کے بے کل
تو انگلی سے مسوڑوں پر نمک مَل

جو طاقت میں کمی ہوتی ہو محسوس
تو مصری کی ڈلی ملتان کی چوس

شفا چاہیے اگر کھانسی سے جلدی
تو پی لے دودھ میں تھوڑی سی ہلدی

اگر کانوں میں تکلیف ہووے
تو سرسوں کا تیل پھائے سے نچوڑے

اگر آنکھوں میں پڑ جاتے ہوں جالے
تو دکھنی مرچ گھی کے ساتھ کھا لے

تپ دق سے اگر چاہیے رہائی
بدل پانی کے گّنا چوس بھائی

دمہ میں یہ غذا بے شک ہے اچھی
کھٹائی چھوڑ کھا دریا کی مچھلی

اگر تجھ کو لگے جاڑے میں سردی
تو استعمال کر انڈے کی زردی

جو بد ہضمی میں تو چاہے افاقہ
تو دو اِک وقت کا کر لے تو فاقہ

Monday, October 10, 2016

What is Audit?

Once upon a time there was a shepherd looking after his sheep on the side of a deserted road. Suddenly a brand new Porsche screeches to a halt. The driver, a man dressed in an Armani suit,
Cerutti shoes, Ray-Ban sunglasses, TAG-Heuer wrist watch, and a Pierre Cardin tie gets out and asks the shepherd, 'If I can tell you how many sheep you have, will you give me one of them?'

The shepherd looks at
the young man, then looks at the large flock of grazing sheep and replies, 'Okay.'The young man parks the car, connects his laptop to the mobile-fax, enters a NASA Website, scans the ground using his GPS, opens a database and 60 Excel tables filled with algorithms and pivot tables. He then prints out a 150-page report on his high-tech
mini-printer, turns to the shepherd and says, ‘'You have exactly 1,586 sheep.'.            The shepherd cheers, 'That's correct, you can have your sheep. 'The young man takes one of the animals from the flock and puts it in the back of his Porsche.

The shepherd looks at him and asks, 'If I guess your profession, will you return my animal to me?' The young
man answers, 'Yes, why not?' The shepherd says, 'You are an auditor.'
'How did you know?' asks the young man. 'Very simple,' answers the shepherd.'Firstly, you came here without being wanted. Secondly, you charged me a fee to tell me something I already knew. Thirdly, you don't understand anything about my business.....Now can I have my DOG back?

Saturday, October 08, 2016

Live Your Life Before Life Becomes Lifeless

A boat is docked in a tiny Mexican fishing village.

A tourist complimented the  local fishermen on the quality of their fish and asked how long it took to catch them. 

"Not very long." they answered in unison.

"Why didn't you stay out longer and catch more?"

The fishermen explained that their small catches were sufficient to meet their needs and those of their families. 

"But what do you do with the rest of your time?"

"We sleep late, fish a little, play with our children, and take siestas with our wives.  In the evenings, we go into the village to see our friends, have a few drinks, play the guitar, and sing a few songs.  

We have a full life."
The tourist interrupted, 

"I have an MBA from Harvard and I can help you!
You should start by fishing longer every day.
You can then sell the extra fish you catch.
With the extra revenue, you can buy a bigger boat."

"And after that?"

"With the extra money the larger boat will bring, you can buy a second one and a third one and so on until you have an entire fleet of trawlers.
Instead of selling your fish to a middle man, you can then negotiate directly with the processing plants and maybe even open your own plant. 

You can then leave this little village and move to  Mexico City , Los Angeles , or even  New York City ! 

From there you can direct your huge new enterprise."

"How long would that take?"  

"Twenty, perhaps twenty-five years." replied the tourist.  

"And after that?"   

"Afterwards?  Well my friend, that's when it gets really interesting," answered the tourist, laughing.  "When your business gets really big, you can start buying and selling stocks and make millions!"     

"Millions?  Really?  And after that?" asked the fishermen. 

"After that you'll be able to retire, live in a tiny village near the coast, sleep late, play with your children, catch a few fish, take a siesta with your wife and spend your evenings drinking and enjoying your friends."

"With all due respect sir, but that's exactly what we are doing now.  So what's the point wasting twenty-five years?" asked the Mexicans. 

Moral of the Story : 

Know where you're going in life, you may already be there!  Many times in life, money is not everything.

Wednesday, October 05, 2016

Keep smiling

An Old man has 8 hair on his head.

He went to the Barber shop.
Barber in anger asked:

shall i cut or count?

Old man smiled and said:

"Colour it!"

LIFE is to enjoy with whatever you have with you, keep smiling.

Monday, October 03, 2016

گوگل کے چیف ایکزیکٹیو "سندرراجن پچائی" ہیں

As received:

اس وقت گوگل کے چیف ایکزیکٹیو "سندرراجن پچائی" ہیں ۔ جن کا تعلق بھارت سے ہے۔ ان کی سالانہ تنخواہ پاکستانی روپے میں 2 ارب روپے سے زائد بنتی ہے۔ جو کہ اس وقت دنیا میں سب سے زیادہ تنخواہ لینے والے ملازم بھی ہیں ۔ آئیے ان کے بارے میں دوستوں کو کچھ معلومات فراہم کرتے ہیں۔کہ ایک دو کمروں کے گھر میں چٹائی پر بیٹھ کر پڑھنے والا شخص کس طرح گوگل کا سی ای او بنا ۔

سندر پچائی تامل ناڈو کے شہر مدورائی کا رہنے والا تھا جو کہ 12 جولائی 1972 کا پیدا ہوا۔اس نے غربت میں آنکھ کھولی‘ والد رگوناتھ پچائی الیکٹریکل انجینئر تھا لیکن خاندان کی آمدنی بہت محدود تھی‘ گھر دو کمروں کا فلیٹ تھا‘ اس فلیٹ میں اس کا ٹھکانہ ڈرائنگ روم کا فرش تھا‘ وہ فرش پر چٹائی بچھا کر بیٹھ جاتا تھا‘ وہ پڑھتے پڑھتے تھک جاتا تھا تو وہ سرہانے سے ٹیک لگا کر فرش پر ہی سو جاتا تھا‘ ماں کے ساتھ مارکیٹ سے سودا لانا‘ گلی کے نلکے سے پانی بھرنا‘ تار سے سوکھے کپڑے اتارنا اور گلی میں کرکٹ کھیلنے والے بچوں کو بھگانا بھی اس کی ذمہ داری تھی‘ گھر کی مرغیوں اور ان کے انڈوں کو دشمن کی نظروں سے بچانا بھی اس کی ڈیوٹی تھی اور شہر بھر میں کون سی چیز کس جگہ سے سستی ملتی ہے‘ یہ تلاش بھی اس کا فرض تھا اور باپ اور ماں دونوں کی جھڑکیاں کھانا بھی اس کی ذمہ داری تھی‘ وہ بارہ سال کا تھا جب ان کے گھر ٹیلی فون لگا‘ اس فون نے اس کا کام بڑھا دیا‘ وہ فلیٹس کے اس پورے بلاک کا پیغام بر بن گیا‘ لوگ اس کے گھر فون کر کے بلاک کے دوسرے فلیٹس کےلئے پیغام چھوڑتے تھے اور وہ یہ پیغام پہنچانے کےلئے اٹھ کر دوڑ پڑتا تھا‘ وہ جوانی تک ٹیلی ویژن اور گاڑی کی نعمت سے بھی محروم رہا‘ اس کا والد پوری زندگی کار نہیں خرید سکا لیکن آج وہ نہ صرف دنیا کی سب سے بڑی آرگنائزیشن گوگل کا سی ای او تھا بلکہ وہ دنیا میں سب سے زیادہ تنخواہ لینے والا ملازم بھی تھا‘ اس کی سالانہ تنخواہ 20 کروڑ ڈالر طے ہو چکی تھی۔
بچپن میں وہ سال سال بھر دوسرے جوتے‘ تیسری شرٹ اور چوتھے پین کےلئے ترستا رہتا تھا‘ وہ بچپن‘ بچپن نہیں تھا‘ وہ محرومی کی ایک سیاہ داستان تھی‘ پچائی کو آج بھی یاد تھا جب سٹینڈ فورڈ یونیورسٹی نے اسے ہوائی ٹکٹ بھجوایا تو اس کا والد ٹکٹ دیکھ کر حیران رہ گیا‘ وہ ٹکٹ اس کے والد کی سالانہ آمدنی سے بھی مہنگا تھا‘ اسے آج تک یہ بھی یاد تھا وہ کورس کی کتابیں مانگ کر پڑھتا تھا اور اپنی اسائنمنٹس ردی کے کاغذوں پر مکمل کرتا تھا‘ وہ بسوں کے ساتھ لٹک کر سفر کرتا تھا اور اسے صرف مذہبی تہواروں پر مٹھائی نصیب ہوتی تھی‘اس نے گھسٹ گھسٹ کر چنائے سے بارہویں جماعت پاس کی‘ وہ اس کے بعد انڈین انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی خراگپور چلا گیا‘ اس نے وہاں ٹیوشنز پڑھا پڑھا کر میٹالرجیکل انجینئرنگ کی ڈگری لی‘ اس نے یہ ڈگری ٹاپ پوزیشن میں حاصل کی تھی چنانچہ دنیا میں ٹیکنالوجی کی سب سے بڑی یونیورسٹی سٹینڈفورڈ نے اسے وظیفہ دے دیا‘ وہ امریکا چلا گیا‘ اس نے سٹینڈفورڈ یونیورسٹی سے میٹالرجیکل انجینئرنگ میں ایم ایس کیا‘ وہ انجینئرنگ سے بڑا کام کرنا چاہتا تھا‘ 2004ءمیں جب گوگل میں نوکریاں نکلیں تو اس نے اپلائی کر دیا‘ گوگل نے اسے پراجیکٹ مینجمنٹ ڈیپارٹمنٹ میں ملازمت دے دی‘ یہ ملازمت اس کےلئے نعمت ثابت ہوئی‘ سندر راجن پچائی اس یونٹ کا حصہ تھا جس نے ”گوگل کروم“ کا منصوبہ شروع کیا‘ یہ منصوبہ 2008ءمیں مکمل ہوا اور اس کے ساتھ ہی پچائی گوگل اور امریکا دونوں میں مشہور ہو گیا‘ اس کا دماغ ذرخیز تھا چنانچہ وہ گوگل کےلئے نئے نئے منصوبے بناتا رہا‘ گوگل کا ویب براؤزر ہو‘ اینڈروئڈ ہو یا گوگل ٹول بار‘ ڈیسک ٹاپ سرچ اور گوگل گیئرز یہ تمام پراجیکٹ سندر راجن پچائی نے مکمل کئے‘ ان منصوبوں سے گوگل کی آمدنی میں اضافہ ہوا‘ گوگل اس وقت دنیا کی امیر ترین کمپنی ہے‘ اس کی مالیت 554 ارب ڈالر ہو چکی ہے جبکہ اس کی سالانہ آمدنی 74 بلین ڈالر ہے‘ پاکستان کے کل غیرملکی قرضے 70 بلین ڈالر ہیں‘ گویا گوگل ایک سال میں دنیا کی واحد اسلامی جوہری طاقت کے کل قرضوں سے زیادہ رقم کماتا ہے‘ یہ کمپنی سٹینڈفورڈ یونیورسٹی کے دو طالب علموں لیری پیج اور سرجے برن نے 1996ءمیں شروع کی‘ یہ دونوں اس وقت پی ایچ ڈی کے طالب علم تھے‘ گوگل کا مقصد انٹرنیٹ پر موجود مواد کو درجوں میں تقسیم کرنا اور اسے لوگوں کےلئے آسان بنانا تھا‘ گوگل 2000ءتک دنیا کا معتبر ترین سرچ انجن بن گیا‘ یہ کمپنی دنیا بھر سے نیا ٹیلنٹ تلاش کرتی رہتی ہے‘ سندر راجن پچائی بھی اس کی دریافت تھا‘ یہ نوجوان 1972ءمیں تامل ناڈو میں پیدا ہوا‘ یہ 1993ءمیں سٹینڈفورڈ یونیورسٹی پہنچا‘ 1995-96ءمیں ایم ایس اور 2002ءمیں ایم بی اے کیا‘ یہ زندگی میں بہت کچھ کرنا چاہتا تھا اور گوگل نے اسے یہ بہت کچھ کرنے کا موقع دے دیا‘ یہ اپنے دلچسپ آئیڈیاز کے ذریعے بہت جلد کمپنی میں اپنی جگہ بنا گیا‘ یہ تیزی سے ترقی کرتے ہوئے 10 اگست 2015ءکو گوگل کا سی ای او اور لیری پیج کا نائب بن گیا‘ کمپنی نے اسے شیئر بھی دے دیئے‘ یہ اس وقت 60 کروڑ 50 لاکھ ڈالرز کے شیئرز کا مالک بھی ہے۔
گوگل نے پچائی کو فروری 2016ءکے دوسرے ہفتے 19 کروڑ 90 لاکھ ڈالر تنخواہ کا چیک دیا‘ پچائی یہ چیک وصول کرتے ہی دنیا کا سب سے زیادہ معاوضہ لینے والا ”سی ای او“ بن گیا‘ ہم اگر انہیں پاکستانی روپوں میں تبدیل کریں تو یہ دوسو کروڑ روپے بنیں گے گویا تامل ناڈو کا 43 برس کا ایک غریب جوان سالانہ دو سو کروڑ روپے تنخواہ لے رہا ہے اور غریب بھی ایسا جس نے 18 سال کی عمر تک فرش پر سو کر اور فرش پر بیٹھ کر تعلیم حاصل کی اور جو 12 سال کی عمر تک ٹیلی فون اور امریکا آنے تک ٹیلی ویژن اور گاڑی سے محروم تھا اور جس کا پورا بچپن دوسرے جوتے‘ تیسری شرٹ اور چوتھے پین کو ترستے گزرا اور جو آج بھی ہندی لہجے میں انگریزی بولتا ہے اور اپنے گندمی رنگ کی وجہ سے دور سے پہچانا جاتا ہے ۔

معلم جلدی بوڑھے نہیں ھوتے

ایک صاحب کی شادی کی عمر نکل گئ آخر ایک لڑکی پسند آ گئ تو رشتہ پرپوز کیا لڑکی نے دو شرطیں رکھیں اور شادی پر تیار ھو گئ ایک یہ کہ ھمیشہ جوانوں میں بیٹھو گے دوسرا دیوار پھلانگ کے گھر آیا کرو گے ! شادی ھو گئ بابا جی جوانوں میں ھی بیٹھتے اور گپیں لگاتے،جوان ظاھر ھے لڑکیوں کی اور پیار محبت کی ھی باتیں کرتے ھیں،منڈیوں کے بھاؤ سے انہیں دلچسپی نہیں اور نہ موضوعات شریف سے کچھ لینا دینا،، بابا کا موڈ ھر وقت رومینٹک رھتا اور جاتے اور ایک جھٹکے سے دیوار پھلانگ کر گھر میں دھم سے کود جاتے !
آخر ایک دن بابا جی کے پرانے جاننے والے مل گئے ، وہ انہیں گلے شکوے کر کے اور گھیر گھار کے اپنی پنڈال چوکڑی میں لے گئے،، اب وھاں کیا باتیں ھونی تھیں ؟ یار گھٹنوں کے درد سے مر گیا ھوں بیٹھ کر نماز پڑھتا ھوں،، میری تو بھائی جان ریڑھ کی ھڈی کا مہرہ کھل گیا ھے،ڈاکٹر کہتا ھے جھٹکا نہ لگے،، یار مجھے تو نظر ھی کچھ نہیں آتا کل پانی کے بجائے مٹی کا تیل پی گیا تھا، ڈرپ لگی ھے تو جان بچی ھے،، بابا جوں جوں ان کی باتیں سنتا گیا توں توں اس کا مورال زمین پر لگتا گیا،، جب ٹھیک پاتال میں پہنچا تو مجلس برخواست ھو گئ اور بابا گھسٹتے پاؤں کے ساتھ گھر کو روانہ ھوا !
گھر پہنچ کر دیوار کو دیکھا تو گھر کی دیوار کی بجائے وہ دیوارِ چین لگی ،، ھمت نہ پڑی دیوار کودنے کی کہ کہیں بابے پھجے کی طرح چُک نہ نکل آئے آخر ماڈل تو دونوں کا ایک ھی تھا،بابا نے کُنڈہ کھٹکھٹایا،،کھٹ کھٹ ،، اندر سے بیوی بولی اسی لئی بولا تھا جوانوں میں بیٹھا کر ،لگتا ھے آج بوڑھوں کی مجلس اٹینڈ کر لی ھے،اسی لئے ھمت جواب دے گئ ھے !
نتیجہ ! انسان بوڑھا نہیں ھوتا مجلس بوڑھا کر دیتی ھے،، ماھرین نفسیات لکھتے ھیں کہ معلم اسی لئے جلدی بوڑھے نہیں ھوتے کیونکہ وہ بچوں کی مجلس میں رھتے ھیں یوں وہ ماحول ان پر ٹائم اینڈ سپیس کے اثرات کو نیوٹرل کر دیتا ھے.

Saturday, September 17, 2016

Khutba in Arafat by Imam of Baitullah on Hajj 2016

Points from Khutba in Arafat by Imam of Baitullah on this Hajj. Long but each point is precious diamond. Forward far and wide:

☂Surround urself with Muslims who practice the Deen. They are ur only True Friends in this Life and in the Hereafter.
☂Not everybody is out there to judge you, there are some who want the best for you and want to help you get into Al-Jannah, value them.
☂Indeed, a friend who doesn't care about your Aakhirāh is not really your friend.
☂Sometimes the hardest person for you to correct is yourself. There is no shame in being wrong, the shame is in choosing to stay on the wrong path.
☂Whatever takes you NEAR to Allah, takes you AWAY from Hellfire. Whatever takes you AWAY from Allah, takes you CLOSER to Hellfire.
☂We all take tomorrow for granted because we believe tomorrow will always be there. Tomorrow may be there, but we may not!
☂Who said "TOMORROW" is guaranteed? Make the use of "TODAY" that you are blessed with!
☂Yesterday many thought that they would see today, and today many will think they will see tomorrow.
☂Death could be tonight, in the next hour, the next second, yet we live as if we still have so many years to live.
☂You may be rich, famous or have a high status in this dunyah, but to the Angel of Death, you're just another name on the list.
☂Our death and meeting with our Creator is approaching and yet our biggest worry is what are we going to wear tomorrow?  #‎in  competition
☂One day you'll just be a memory for people, and a lesson to others. Do everything you can to please Allah, be a positive lesson.
☂Just imagine how many people were here with us last year, but are no longer here again! Even our turn is soon approaching. May Allah forgive us an forgive them.
☂We walk with our heads high up in the sky, unaware that one day we'll be trapped 6' Feet under the ground.  #‎Reminder
☂You look for the latest fashion and designer clothes, but don't forget O' Son of Adam! You will end up being wrapped up in just a white shroud.
☂Live to please the Creator, not the creation. If Allah is happy with us, what more can we ask for?
☂It's sad how we only begin to appreciate blessings, either materialistic things or good people; only after we lose them. When it's too late!? Do we really invest to be like them?
☂You wouldn't throw away a diamond to pick up a rock, so in the same way, don't throw away the Aakhirah (Paradise) by chasing the Dunya (worldly).
☂How do you expect to get Al-Jannah (paradise) when you haven't worked for it in Dunya? That's like expecting to pass an exam you never took a class for.
☂We live in a time where people leave out food in fear of becoming overweight, but cannot leave out sins in fear of Allah!
☂For a believer. — you may be penniless, homeless, unemployed, sick and feel like you have nothing. But you have the One thing that money can't buy: "Allah".
☂Allāh knows what you want, what you need, what you deserve, at what time & what place, trust Him & His decisions (is best for HIS creation), He knows while you don't.
☂If a kaafir celebrity mentioned your name to the world, how happy would you be? Mention Allah in a gathering, and He mentions you to the angels!
☂And, make the Qur'an your companion and a part of your life. Don't let urself become a stranger to it. The Qur'an is like a friend, the longer the friendship lasts the more you will know of its secrets.
☂Don't praise me because I'm on my Deen, but pray for me because I have faults which you have not seen.
ُ"Truly, Allah loves those who repent (the prodigal son), and He loves those who cleanse themselves." [Al-Quran 2:222].
May Allah purify our hearts. And peace and blessings of Allah be upon our noble Messenger of Allah, Muhammad and his household.

Saturday, September 03, 2016

Python: Performance comparison of Bubble , Insertion, and Selection sort


starting bubble sort
starting insertion sort
starting selection sort


def SelectionSort(alist):

    for i in range(0, len(alist) - 1):

        min = i

        for j in range(i+1, len(alist)):

            if( alist[j] < alist[min]):

                min = j

        if min != i:

            temp = alist[i]

            alist[i] = alist[min]

            alist[min] = temp

    return alist

def insertionSort(alist):

    for i in range(0,len(alist)):

        key = alist[i]

        j = i - 1

        while j>=0 and alist[j]>key:

            alist[j+1] = alist[j]

            j = j - 1

        alist[j+1] = key

    return alist

def BubbleSort(alist):

    for i in range(0,len(alist)):

        swap = 0

        for j in range(0,len(alist)-1-i):


                temp = alist[j]

                alist[j] = alist[j+1]

                alist[j+1] = temp

                swap = swap + 1

        if(swap == 0):

    return alist

def CompareSortingAlgos(limit):

    import random

    import time

    l = []

    for i in range (0, limit):

        n = int((random.gauss(4,2) * 10000) % 999)

        l = l + [n]

    print("starting bubble sort")

    start = time.time()

    j = BubbleSort(l)

    print(time.time() - start)

    print("starting insertion sort")

    start = time.time()

    k = insertionSort(l)

    print(time.time() - start)

    print("starting selection sort")

    start = time.time()

    l = SelectionSort(l)

    print(time.time() - start)

آسانیاں بانٹنا

کسی بزرگ نے کہا کہ: "اللہ آپ کو آسانیاں بانٹنےکی توفیق عطا کرے"
جواب دیا کے ہم مال پاک کرنے کے لئے زکات بھی دیتے ہیں ، بلا ٹالنے کے لئے حسب ضرورت صدقہ بھی دیتے ہیں ، اور تو اور کام والی کے بچے کی تعلیم کا ذمہ بھی اٹھایا ہوا ہے، ہم تو کافی آسانیاں بانٹ چکے.....
ایک مضطرب مسکراہٹ کے بعد فرمایا : بیٹا ! سانس، پیسے ، کھانا، یہ سب رزق کی اقسام ہیں ، اور رازق وہ ہے تم نہیں؛ تم یہ سب کرنا چھوڑ دو تو بھی اس کی ذات یہ سب فقط ایک ساعت میں عطا کر سکتی ہے ، تم تو یہ سب کر کے محض اشرف المخلوقات ہونے کا فرض ادا کر رہے ہو .
میں تمہیں سمجھاتا ہوں آسانیاں بانٹنا کیا ہے ،
کسی اداس اور مایوس آدمی کے کندھے پے ہاتھ رکھ کے اس کی ایک گھنٹہ لمبی بات پیشانی پے بغیر شکن لاۓ سننا آسانی ہے ،
کسی بیوہ کی بیٹی کے رشتے کی اپنی ضمانت پے تگ ودو کرنا آسانی ہے ،
صبح آفس جاتے ہوے کسی یتیم بچے کو اسکول لے جانے کی ذمہ داری لینا آسانی ہے ،
اگر آپ کسی گھر کے داماد یا بہنوئی ہیں تو خود کو تمام رشتوں سے افضل نہ سمجھنا بھی آسانی ہے ،
کسی غصے میں بپھرے آدمی کی نہایت غلط بات برداشت کرنا آسانی ہے ،
کسی کی غلطی ، لغزش یا غلط فہمی پے خدائی صفت بروے کار لانا اور پردہ ڈالنا بھی آسانی ہے ..
چاۓ والے کو اوے کہ کے نہ بلانا بھی آسانی ہے ،
گلی کے کونے پے چھابڑی والے سے دام پے بحث نا کرنا آسانی ہے ،
آفس ، دکان یا کام کی جگہ پے چوکیدار یا ملازم سے گرم جوشی سے ملنا اور اس کے بچوں کا حال پوچھنا بھی آسانی ہے ،
ہسپتال میں اپنے مریض کی دیکھ بھال کے ساتھ، برابر والے بستر پے پڑے انجان مریض کے پاس بیٹھ کےدولمحےتسّلی دینا بھی آسانی ہے،
اشارے پے کھڑے ہو کے کسی ایسے شخص کو ہارن نہ دینا جس کی موٹر بائیک آپ کی گاڑی کے آگے بند ہو جاۓ، یہ بھی آسانی ہے ،
بیٹا جی ! آسانی گھر سے ہی شروع کریں ،
آج واپس جا کے گھر کی بیل ایک دفعہ دے کے تھوڑا انتظار کریں ،
باپ کی ڈانٹ ایسے سنیں جیسے ریڈیو پے گانا سنتے ہیں ،
ماں کی بات اس کی دوسری آواز دینے سے پہلے سنیں ،
بہن کی ضرورت اس کی شکایت سے پہلے پوری کر دیں ،
بیگم کی غلطی پے اس کو سب کے سامنے درست نہ کریں ،
سالن اچھا نہ لگے تو شکایت نہ کریں ، استری ٹھیک نہ ہو تو خود کر لیں ،
بیٹا جی ! زندگی آپ کی محتاج نہیں ، آپ اس کے محتاج ہیں ، منزل کی فکر چھوڑیں ،
اپنا اور دوسروں کا راستہ آسان بنائیں ، منزل خود ہی مل جاۓ گی ....
اللہ ہم سب کو آسانیاں بانٹنے کی توفیق عطا


Tuesday, August 30, 2016

آذان و نماز کا احترام

امام احمد بن حنبل کے پڑوس میں ایک لوہار رہتا تھا جب وہ فوت ہوا تو ایک محدث نے انکو خواب میں دیکھا پوچھا کہ فرمائیں کیا معاملہ پیش آیا ۔ لوہار نے کہا کہ مجھے امام احمد کے برابر درجہ ملا ہے ۔ اور اللہ مجھ سے راضی ہے ۔ وہ محدث بڑا حیران ہوا کہ یہ تو ایک عام سا دنیادار لوہار تھا جبکہ امام احمد تو دین و دنیا کے مسائل سمجھاتے قرآن و احادیث کا علم پھیلاتے کتنی مشکلات کا سامنا کیا ۔
اس محدث نے دوسرے علما کو یہ بات بتائی تو سب نے مشورہ کیا کہ ہم لوہار کے اہلہ خانہ سے پتہ کرنا چاہیے۔ وہ انکے گھر چلے گئے ۔ اس محدث نے پوچھا " بی بی آپکے شوہر کو ہم نے بہت اچھے درجے میں دیکھا ہے کیا آپ انکے کسی حاص عمل کا علم رکھتی ہے جو انکے زندگی میں عام تھا ۔ لوہار کی بیوی نے کہا کہ میرا شوہر کوئی حاص عمل نہیں کرتا تھا وہ ایک دنیا دار انسان تھا ۔ سارا دن وہ لوہے کا کام کرتا تھا ۔
میرے شوہر کے دو نمایاں عمل جو میں نے محسوس کیے ان میں ایک تو یہ کہ انکے اندر آذان و نماز کا بے حد احترام تھا ۔ اگر لوہے پہ ضرب مارنے کے لیے کھبی انکا ہاتھ اوپر ہوتا اور اسی وقت اللہ اکبر کی آواز آتی تو آپ اسی وقت اپنا ہاتھ نیچے کرلیتے وضو کرتے اور نماز پڑھنے چلے جاتے۔
دوسری بات یہ کہ میرے شوہر سارا دن دکان پہ مصروف ہوتے رات کو ہم چھت کے اوپر سوتے ہمارے  پڑوس میں امام احمد بن حنبل رہتے تھے جو ساری ساری رات قرآن کی تلاوت کرتے میرے شوہر حسرت سے انکی طرف دیکھتے اور ٹھنڈی آہیں بھرتے اور اللہ سے دعا کرتے کہ یااللہ میں بے حد غریب انسان ہوں آپ سے میرا کچھ چھپا نہیں اگر میری کمر ہلکی ہوتی تو میں بھی اس طرح امام صاحب جیسے ساری رات قرآن پڑھا کرتا تھا ۔ کھب کھبی میرے شوہر یہ دعا کرتے ہوے رونے لگ جاتے ۔
اس محدث نے کہا کہ آذان کے ادب اور نیکی کرنے کی تڑپ کی وجہ سے ہی اللہ پاک نے آپکے شوہر کی مغفرت کی ہے اور انکو امام حنبل کے برابر درجہ دیا ہے ۔
ہمارے بچپن میں جب آذان ہوتی تھی تو ٹی وی بند کردیا جاتا کہ آذان ہورہی ،پھر وقت آیا جب آذان کے وقت ٹی بند کرنے کی روایت ختم ہوئی اور بس آواز بند کرنے پہ اکتفا کیا گیا ۔ وقت گزر گیا اور آج آذان بھی ہورہی ہوتی ھے اور سٹار پلس بھی چلتا ہے۔
شیئر کیجیے اور اس پیغام کو دور دور تک پھیلانے میں ھمارے مددگار بنیئے.. یہ صدقہ جاریہ ھے..!! فرقہ واریت اور مسلکی تعصب سے پاک ایک خالص اصلاحی گروپ(اصلاح امت).. جہاں ھم امت مسلمہ کے اتحاد و اتفاق کے لیے کوشاں ھیں....

Sunday, August 21, 2016

اللہ کی دی ہوئ نعمتوں کی قدر کیجئے

کسی جنگل میں ایک کوا رہتا تھا۔ کوا اپنی زندگی سے بڑا مطمئن اور خوش باش تھا۔ ایک دن کوے نے پانی میں تیرتے سفید ہنس کو دیکھا۔ کوا ہنس کے دودھ جیسے سفید رنگ اور خوبصورتی سے بڑا متاثرهوا اور سوچنے لگا کہ یہ ہنس تو یقینا'' دنیا کا خوبصورت ترین اور خوش ترین پرندہ ہوگا۔اس کے مقابلے میں میں کتنا کالا کلوٹا اور بھدا ہوں۔
کوے نے جب یہی بات ہنس سے کی تو ہنس بولا کہ میں بھی اپنے آپ کو دنیا کا خوبصورت اور خوش قسمت ترین پرندہ سمجھتا تھا لیکن جب میں نے طوطے کو دیکھا تو مجھے اس پر رشک آیا کہ اس کو دو خوبصورت رنگوں سے نوازا گیا ہے۔ میرے خیال میں تو طوطا دنیا کا سب سے خوبصورت پرندہ ہے۔
کوا یہ سن کر طوطے کے پاس پہنچا۔جب اس نے یہی بات طوطے سے کہی تو طوطا بولا۔'' میں بھی بڑا خوش باش اور اپنی زندگی اورخوبصورتی سے بہت مطمئن تھا لیکن جب سے میں نے مور کو دیکھا ہے میرا سارا سكون اور خوشی غارت ہو گئ ہے۔ مور کو تو قدرت نے بیشمار پنکھوں اور خوب صورت رنگوں سے نوازا ہے۔۔
کوا مور کو ڈھونڈتے ہوے چڑیا گھر پہنچ گیا جہاں مور ایک پنجرے میں قید تھا اور سینکڑوں لوگ اسے دیکھنے کے لئے جمع تھے۔ شام کو جب لوگوں کی بھیڑ زرا چھٹی تو کوا مور کے پاس پہنچا اور بولا، '' پیارے مور، تم کس قدر خوبصورت ہو۔ تمہارا ایک ایک رنگ کتنا خوبصورت ہے۔ روزانہ ہزاروں لوگ تمہیں دیکھنے آتے ہیں اور ایک میں ہوں کہ مجھے دیکھتے ہی شو شو کر کے مجھے بھگا دیتے ہیں۔ تم یقینا'' دنیا کے خوبصورت اور خوش قسمت ترین پرندے ہو۔ تم کتنے خوش ہوگے۔ ''
مور بولا۔ '' ہاں میں بھی خود کو دنیا کا سب سے حسین پرندہ سمجھتا تھا لیکن ایک دن اسی خوبصورتی کی وجہ سے مجھے پکڑ کر اس پنجرے میں قید کرلیا گیا۔ جب میں اس چڑیا گھر کا جائزہ لیتا ہوں تو احساس ہوتا ہے کہ واحد کوا ہی ایسا پرندہ ہے جسے آج تک پنجرے میں نہیں رکھا گیا۔ اب پچھلے کچھ دنوں سے میں سوچتا ہوں کہ کاش میں ایک کوا ہوتا اور آزادی سے جنگلوں میں اڑتا گھومتا پھرتا۔''
بالکل یہی مسئلہ ہمارا بھی ہے۔ ہم ہر وقت غیر ضروری طور پر دوسروں کے ساتھ اپنا موازنہ کرتے رہتے ہیں۔۔ اللہ پاک نے ہمیں جن نعمتوں اور صلاحیتوں سے نوازا ہے ان کی قدر نہیں کرتے اور ہر وقت شکائتیں کرتے رہتے ہیں۔ یہی نا شکری ہم سے ہماری خوشی و شادمانی چھین لیتی ہے۔ ایک کے بعد ایک غم اور اداسی ہم کو گھیر لیتی ہے۔
اللہ کی دی ہوئ نعمتوں کی قدر کیجئے۔ فضول میں اپنا موازنہ دوسروں سے نہ کیجئے۔یہی خوشی اور سکون کا راز ہے۔