Skip to main content

Usman Institute of Technology (http://www.uit.edu), Hamdard University, was established in 1994 through a benefaction of Usman Memorial Foundation as a private, non-for-profit centre of excellence in technology. Its aim is to prepare engineers, technologists and scientists who have the character and skill that the country needs and who would be readily employable on graduation to serve Pakistan.

On 27th February 2006 Usman Institute of Technology Computer Society (UITCS) and INETA successfully organised “Launch Event of Microsoft Visual Studio.Net 2005” at UIT Auditorium.

The event started at 15:30 with recitation of Holy Quran by Faraz Iqbal. The anchor person Sobia Siddiqui gave a brief introduction of UIT Computer Soceity and the speakers. The opening address was delivered by Dr. Prof Muhammad Saleem Khan (Director UIT). Students, faculties and professionals from various institutions participated in the event and the auditorium was full to its capacity.

INETA Launch Team Members Mr. Nasim Siddiqui (Software Architect, Kalsoft) and Mr. Naveed Bajwa (Technology Consultant, Kalsoft) delivered presentations on “Visual Studio.Net 2005, SQL Server 2005 highlighting the new features of the products. The presentations helped the audience to understand how Microsoft’s latest easy to use technologies can help us to increase productivity by focusing on business logic instead of coding during the development process.

The presentations were followed by a Q/A session in which speakers answered questions by the audience. The closing address was delivered by Engr. Parkash Lohana (Head of Computer Science Department). Dr. Prof Muhammad Saleem Khan and Engr. Parkash Lohana presented memorials to the speakers. The event formally ended at 18:30 with the distribution of Microsoft bags among the audience on referral draw.

It is worthwhile to mention the efforts of organizing team of UIT Computer Science Society for event. The organizing team was consisting of students: Muhammad Qasim Pasta (Microsoft Student Ambassador & Chairman UITCS), Syed Shahid Mahmood (Vice Chairman), Jahanzeb Khan (Secretary), Syed Moazzam Ali (Joint Secretary), Haseeb Ali Chishti, Abdul Moid, Faraz Ahmed Khan, Azfar Mahmood, Zeeshan Khan, Ahmed Obaid, Muhamamd Hasan (Treasure), Sadaf, Murtaza Qaiyum, Ahsan Abidi, Ahsan Ali, Oneeb Ahmed, Sobia Siddiqui, Azra Ashfaq, Hairs Rafiq, Ahmed ur Rehman, Faraz, Shehryar, Shoiab Ahmed and Mustafa.



Anchor Person, Sobia Siddiqui








Speakers: Naveed Bajwa (Left) & Nasim Siddiqui(Right)







Dr. (Prof.) Saleem Khan (Director of UIT), delivering Welcome note.












Naveed Bajwa, giving presentation on Visual Studio 2005













Nasim Siddiqui, giving presentation on SQL 2005.











Inside view of Auditorium





Eng. Parkash Lohana (HOD Computer Science), giving Vote of Thanks






Dr. (Prof). Saleem Khan, Director of UIT, presenting memorials to Nasim Siddiqui









Eng. Parkash Lohana (HOD Computer Science) presenting memorial to Naveed Bajwa





Group Photos


Post a Comment

Popular posts from this blog

Mirat-ul-Uroos - Fariha Pervez - Lyrics

میرا ایک چھوٹا سا سپنا ہے
جسے پل میں پورا کر دے گا
ان آتی جاتی سانسوں میں
وہ خوشبو کوئی بھر دے گا
مجھے اونچی ہواوُں میں اڑنا ہے
اور امبر کو جا چھونا ہے
سونا ہے یار کے بستر پر
پھر ہر ایک خواہش میں جگنا ہے
جب چاہوں گھوموں بگھیا میں
میں تتلی ہوں مجھے پر دیتا
وہاں کیسے چیں ملے مجھ کو
جہاں قدم قدم پر پہرے ہوں
دم گھٹتا ہوجہاں  رہتے ہوئے
جہاں غم کے سائے گہرے ہوں
جومنزل پر لے جائے گی
وہ مجھ کو ایسی ڈگر دے گا
میں چلتے چلتے تھک بھی گئی
اور منزل ہاتھ نہیں آئی
خود اپنے سپنے تور لیئے
اور سکھ کی رات نہیں آئی
اب آکے ہوا مجھے انداذہ
میرا ساتھ وہ ذندگی بھر دے گا
کیوں حد سے گزری وحشت میں
اسے دھیرے دھیرے کیوں نہ چھوا
کیوں سارے ناتے ٹوٹ گئے
بھری بھول ہوئی احساس ہوا
جب ٹوٹے لمحے جوڑوں گی
مجھے جینے کی وہ خبر دے گا
میرا چھوٹا سا اک سپنا ہے
جسے پل میں پورا کردے گا
ان آتی جاتی سانسوں میں
وہ خوشبو کوئی بھر دے گا

ضروری تو نہیں

میں بتا دوں تمہیں ہربات ضروری تو نہیں
آخری ہو یہ ملاقات ضروری تو نہیںجیت جانا تمہیں دشوار نہیں لگتا تھا
آج بھی ہوگی مجھے مات ضروری تو نہیںآدمی فہم و ذکاء سے ہے مزین لیکن
بند ہو جائے خرافات ضروری تو نہیںدل کی راہوں پہ کڑا پہرا ہے خوش فہمی کا
مجھ سے کھیلیں میرے جذبات ضروری تو نہیںامتحاں گاہ سے تو جاتے ہیں سبھی خوش ہوکر
ٹھیک ہوں سب کے جوابات ضروری تو نہیںممتحن میں تو تیرے نام سے لرزاں تھی مگر
تیرے تیکھے ہوں سوالات ضروری تو نہیںمجھ کو انسان کی قدریں بھی بہت بھاتی ہیں
بیش قیمت ہوں جمادات ضروری تو نہیںیوں تو زر اور زمیں بھی ہیں مگر عورت ہو
باعث وجہ فسادات ضروری تو نہیںہر نئے سال کی آمد پر یہ کیوں سوچتی ہوں
اب بدل جائیں گے حالات ضروری تو نہیں[پروین شاکر]

Khuda Karay K Meri Arz -e- Pak Par Utray

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو