Skip to main content

Organized looting at M.A Jinnah Road

Source: http://thenews.jang.com.pk/daily_detail.asp?id=117164

At 5.15 p.m. June 4, I stopped at Plaza, in front of the Polani Motors on Karachi 's busiest thoroughfare, the M. A. Jinnah Road , to have my car's electric window repaired. Soon, I was mobbed by some seven to eight people, who insisted that I get some door rubbers installed. I refused but they started the work nevertheless.

Quickly, I found myself trapped, with these people doing all sorts of work on the car, not listening to my command, directions and pleadings. These people had me so placed that I could not run, scream or phone anybody, even though I was on the busiest road of Karachi . By all means, I was held hostage by them.
Then it was crunch time. Their boss handed me small piece of paper. It was a bill for Rs25,600. He literally ordered me to pay. Yes! You read it correctly, Rs25,600 for work I did not order and I did not know anything about — for installing some rubbers on the doors.

Their boss ordered me to get to the nearest ATM and pay the amount. There are several ATMs in and around Plaza but I stalled. The heavily-guarded portion of Abdullah Haroon Road was my safest bet. I told him, albeit correctly, that my bank was located near the Metropole Hotel and I could not withdraw the amount from One Link ATMs. This was not true, of course.

The head honcho, with a menacing look on his face, sat on the passenger seat of my car, while his colleague sat in the seat behind me as we drove to the ABN-Amro Bank near the US Consulate-General. I told the two to stay seated, inserted my card in the door and entered the bank.

I alerted the bank guards and officials and rang up my editor. I also tried 15, which nobody picked. Soon the police arrived and the two men in my car were escorted to the Artillery Maidan Police Station, in front of the Governor's House. There our crime reporter handled the issue. The agony was finally over.
I learnt that a gang was operating at the Plaza and had robbed several people, charging, in one case Rs40,000 for installing door rubbers. I have heard of three similar cases. In one instance they went to the victim's house to get the money. I was indeed lucky.

There are currently many more members of the gang who are still at large. It would be a good idea to inform your friends and colleagues to avoid the area.

1 comment

Popular posts from this blog

Mirat-ul-Uroos - Fariha Pervez - Lyrics

میرا ایک چھوٹا سا سپنا ہے
جسے پل میں پورا کر دے گا
ان آتی جاتی سانسوں میں
وہ خوشبو کوئی بھر دے گا
مجھے اونچی ہواوُں میں اڑنا ہے
اور امبر کو جا چھونا ہے
سونا ہے یار کے بستر پر
پھر ہر ایک خواہش میں جگنا ہے
جب چاہوں گھوموں بگھیا میں
میں تتلی ہوں مجھے پر دیتا
وہاں کیسے چیں ملے مجھ کو
جہاں قدم قدم پر پہرے ہوں
دم گھٹتا ہوجہاں  رہتے ہوئے
جہاں غم کے سائے گہرے ہوں
جومنزل پر لے جائے گی
وہ مجھ کو ایسی ڈگر دے گا
میں چلتے چلتے تھک بھی گئی
اور منزل ہاتھ نہیں آئی
خود اپنے سپنے تور لیئے
اور سکھ کی رات نہیں آئی
اب آکے ہوا مجھے انداذہ
میرا ساتھ وہ ذندگی بھر دے گا
کیوں حد سے گزری وحشت میں
اسے دھیرے دھیرے کیوں نہ چھوا
کیوں سارے ناتے ٹوٹ گئے
بھری بھول ہوئی احساس ہوا
جب ٹوٹے لمحے جوڑوں گی
مجھے جینے کی وہ خبر دے گا
میرا چھوٹا سا اک سپنا ہے
جسے پل میں پورا کردے گا
ان آتی جاتی سانسوں میں
وہ خوشبو کوئی بھر دے گا

ضروری تو نہیں

میں بتا دوں تمہیں ہربات ضروری تو نہیں
آخری ہو یہ ملاقات ضروری تو نہیںجیت جانا تمہیں دشوار نہیں لگتا تھا
آج بھی ہوگی مجھے مات ضروری تو نہیںآدمی فہم و ذکاء سے ہے مزین لیکن
بند ہو جائے خرافات ضروری تو نہیںدل کی راہوں پہ کڑا پہرا ہے خوش فہمی کا
مجھ سے کھیلیں میرے جذبات ضروری تو نہیںامتحاں گاہ سے تو جاتے ہیں سبھی خوش ہوکر
ٹھیک ہوں سب کے جوابات ضروری تو نہیںممتحن میں تو تیرے نام سے لرزاں تھی مگر
تیرے تیکھے ہوں سوالات ضروری تو نہیںمجھ کو انسان کی قدریں بھی بہت بھاتی ہیں
بیش قیمت ہوں جمادات ضروری تو نہیںیوں تو زر اور زمیں بھی ہیں مگر عورت ہو
باعث وجہ فسادات ضروری تو نہیںہر نئے سال کی آمد پر یہ کیوں سوچتی ہوں
اب بدل جائیں گے حالات ضروری تو نہیں[پروین شاکر]

Khuda Karay K Meri Arz -e- Pak Par Utray

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو