Skip to main content

Short 4-Hour Class On Improving Software Development Processes

A short, fast track 4 hours workshop on Improving Software Development Process is going to held on Friday 9th April 2010 by Humayun Quershi. Out of 370 members of PASHA and PSEB, only 14 qualifies CMMI level II but most of them can't afford certification cost. But I think its great chance for us to learn how to improve our processes. Further details on workshop is given below.

Short 4-Hour Class On


Improving Software Development Processes

A fast-track strategy leading to CMMI level 2


Objective

  • How can we double our programmer productivity?

  • How can we reduce the sw defects shipped by 5 times?

  • How can we motivate and retain our development teams?

  • How can we cushion the impact of key developers leaving at short notice?

This course should help you to improve your software development processes which will result in greatly reduced costs and improved customer satisfaction; dependency on individuals will decrease and the resulting quality culture will attract and retain high performers. Then CMMI Level 2 will not be far behind.

Topics

1. Software Processes – A quick self assessment tool – Where do you stand?

2. The Process Improvement Cycle for CMMI

3. Process Areas for Level 2 – How it all works?

4. 3 Pillars – SW development, Configuration management and Quality management

5. Project planning, monitoring and control – some tools and techniques

6. Quality areas: Measurement & Analysis; Product & Process QA

7. My-Action-Plan for implementing Process Improvement activities

Methodology

Highly interactive workshops, real life examples will be discussed. Use of sample project documents, forms, checklists, etc. Some hard copy and many softcopy handouts shall be distributed (Bring along your flash drives).

Note: Due to short time and large no. topics the class will start at 5.30 pm sharp

Course Leader: Humayun Qureshi, CISA - IT & Management Consultant

40 year IT career of which 31 years at IBM Pakistan

Major Projects: PIA Reservation & Engg. Systems, CDC, PPL SAP, PSM Oracle

SW Design & Development: Healthcare ERP, Manufacturing ERP

Quality Assurance: Attended one of the first ‘Introduction to CMMI’ classes in Pakistan and was nominated by PSEB for CMMI Lead Appraiser Track.

Achieved CMMI Level 2 Certification for Prislogix in 2008

Date: Friday 9th April 2010 Time: 5.30 pm – 9.30 pm

Venue: ILM Education Network

203 / O, Block 2 First Floor - Off Tarique Road

P.E.C.H.S. Opp Ghousia Masjid Near Jheel Park

Karachi

Contact: 0300 2468124 - Just send SMS with your name and we will contact you

Fee:

Company Sponsored attendees: Rs 1000 per person

(20% Discount i.e. Rs 800 per person for 3 or more enrolments)

Self Sponsored attendees: Rs 500 per person

Cost includes handouts, snacks and ILM Network Certificate


Post a Comment

Popular posts from this blog

Mirat-ul-Uroos - Fariha Pervez - Lyrics

میرا ایک چھوٹا سا سپنا ہے
جسے پل میں پورا کر دے گا
ان آتی جاتی سانسوں میں
وہ خوشبو کوئی بھر دے گا
مجھے اونچی ہواوُں میں اڑنا ہے
اور امبر کو جا چھونا ہے
سونا ہے یار کے بستر پر
پھر ہر ایک خواہش میں جگنا ہے
جب چاہوں گھوموں بگھیا میں
میں تتلی ہوں مجھے پر دیتا
وہاں کیسے چیں ملے مجھ کو
جہاں قدم قدم پر پہرے ہوں
دم گھٹتا ہوجہاں  رہتے ہوئے
جہاں غم کے سائے گہرے ہوں
جومنزل پر لے جائے گی
وہ مجھ کو ایسی ڈگر دے گا
میں چلتے چلتے تھک بھی گئی
اور منزل ہاتھ نہیں آئی
خود اپنے سپنے تور لیئے
اور سکھ کی رات نہیں آئی
اب آکے ہوا مجھے انداذہ
میرا ساتھ وہ ذندگی بھر دے گا
کیوں حد سے گزری وحشت میں
اسے دھیرے دھیرے کیوں نہ چھوا
کیوں سارے ناتے ٹوٹ گئے
بھری بھول ہوئی احساس ہوا
جب ٹوٹے لمحے جوڑوں گی
مجھے جینے کی وہ خبر دے گا
میرا چھوٹا سا اک سپنا ہے
جسے پل میں پورا کردے گا
ان آتی جاتی سانسوں میں
وہ خوشبو کوئی بھر دے گا

Khuda Karay K Meri Arz -e- Pak Par Utray

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو

ضروری تو نہیں

میں بتا دوں تمہیں ہربات ضروری تو نہیں
آخری ہو یہ ملاقات ضروری تو نہیںجیت جانا تمہیں دشوار نہیں لگتا تھا
آج بھی ہوگی مجھے مات ضروری تو نہیںآدمی فہم و ذکاء سے ہے مزین لیکن
بند ہو جائے خرافات ضروری تو نہیںدل کی راہوں پہ کڑا پہرا ہے خوش فہمی کا
مجھ سے کھیلیں میرے جذبات ضروری تو نہیںامتحاں گاہ سے تو جاتے ہیں سبھی خوش ہوکر
ٹھیک ہوں سب کے جوابات ضروری تو نہیںممتحن میں تو تیرے نام سے لرزاں تھی مگر
تیرے تیکھے ہوں سوالات ضروری تو نہیںمجھ کو انسان کی قدریں بھی بہت بھاتی ہیں
بیش قیمت ہوں جمادات ضروری تو نہیںیوں تو زر اور زمیں بھی ہیں مگر عورت ہو
باعث وجہ فسادات ضروری تو نہیںہر نئے سال کی آمد پر یہ کیوں سوچتی ہوں
اب بدل جائیں گے حالات ضروری تو نہیں[پروین شاکر]