Skip to main content

Notes from Kough's presentation


Following notes are taken from a presentation "How to do good research, get it published in SIGKDD and get it cited" by Eamonn Kough

·         Must have a problem
·         Write before experiments (similar to literature review?)
·         Make sure you have real datasets (find the dataset available on internet or ask from peers / authors of other papers solving similar problem or generate dataset)
·         Start with simplest idea … convince yourself and then reviewer that this is simples idea
·         Don’t’ have solution? Try solutions from other fields …
·         Make problem simple by taking assumptions, publish early results and then comeback to original problem by removing assumptions one by one
·         Don’t believe everything written in literature is true … don’t trust until you test it
·         Make sure problem really exists
·         Paper must be written in self explanatory form with self explaining figures so reader should not be forced to think
·         Invest time on Title, abstract and introduction: a good introduction with good motivation is half of your success
·         Introduction must have following:
o   What is the problem? And why this problem is interesting (motivation)?
o   Comparison of your approach/methods with others in terms what other methods actually lacking?
o   Key components of your approach (basic idea how you got it) including basic assumptions and limitations
o   A final paragraph states structure of rest of paper
·         Ensure reproducibility, it will help to increase creditability of your work (and so more chances of getting acceptance) and more citation as well.
·         Don’t use phrase like attempt to, tries to, seems to …. Write in oblivious way
·         States why other approaches can’t work (related work) better is to apply other approaches as well.
·         Quote others’ paper:
·         Give mean or variance of results instead of actual values
·         Make good and clear figures: use direct labeling, color and thickness, minimize the details
·         Name columns of table appropriately instead of Method 1 etc. Also don’t use long significant digits
·         Always write your paper imagining the most cynical reviewer looking over your shoulder. This reviewer does not particularly like you, does not have a lot of time to spend on your paper, and does not think you are working in an interesting area. But he will listen to reason

Structure of Paper (division in sections is based on my understanding)
·         Title
o   Make a working title
·         Introduction
o    Introduce the topic and define (informally at this stage) terminology
o    Motivation: Emphasize why is the topic important
o    Relate to current knowledge: what’s been done
o    Indicate the gap: what need’s to be done?
o    Formally pose research questions
·         Related Work
o    Explain any necessary background material.
·         Proposed Algorithm/framework
o    Introduce formal definitions.
o   Introduce your novel algorithm/representation/data structure etc.
o    Describe experimental set-up, explain what the experiments will show
·         Evaluation and Results
o    Describe the datasets
o    Summarize results with figures/tables
o    Discuss results
o    Explain conflicting results, unexpected findings and discrepancies with other research
o    
·         Conclusion and Future Work
o   State limitations of the study
o    State importance of findings
o    Announce directions for further research
·          Acknowledgements
·          References
Post a Comment

Popular posts from this blog

Mirat-ul-Uroos - Fariha Pervez - Lyrics

میرا ایک چھوٹا سا سپنا ہے
جسے پل میں پورا کر دے گا
ان آتی جاتی سانسوں میں
وہ خوشبو کوئی بھر دے گا
مجھے اونچی ہواوُں میں اڑنا ہے
اور امبر کو جا چھونا ہے
سونا ہے یار کے بستر پر
پھر ہر ایک خواہش میں جگنا ہے
جب چاہوں گھوموں بگھیا میں
میں تتلی ہوں مجھے پر دیتا
وہاں کیسے چیں ملے مجھ کو
جہاں قدم قدم پر پہرے ہوں
دم گھٹتا ہوجہاں  رہتے ہوئے
جہاں غم کے سائے گہرے ہوں
جومنزل پر لے جائے گی
وہ مجھ کو ایسی ڈگر دے گا
میں چلتے چلتے تھک بھی گئی
اور منزل ہاتھ نہیں آئی
خود اپنے سپنے تور لیئے
اور سکھ کی رات نہیں آئی
اب آکے ہوا مجھے انداذہ
میرا ساتھ وہ ذندگی بھر دے گا
کیوں حد سے گزری وحشت میں
اسے دھیرے دھیرے کیوں نہ چھوا
کیوں سارے ناتے ٹوٹ گئے
بھری بھول ہوئی احساس ہوا
جب ٹوٹے لمحے جوڑوں گی
مجھے جینے کی وہ خبر دے گا
میرا چھوٹا سا اک سپنا ہے
جسے پل میں پورا کردے گا
ان آتی جاتی سانسوں میں
وہ خوشبو کوئی بھر دے گا

Khuda Karay K Meri Arz -e- Pak Par Utray

خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو یہاں جو پھول کھلے، وہ کھلا رہے صدیوں یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو
یہاں جو سبزہ اگے، وہ ہمیشہ سبز رہے اور ایسا سبز ، کہ جس کی کوٴی مثال نہ ہو گھنی گھٹاٴیں یہاں ایسی بارشیں برسا ٴیں کہ پتھروں سے بھی روٴید گی محال نہ ہو
خدا کرے کہ نہ خم ہو سر وقار وطن اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو ہرایک فرد ہو تہذیب و فن کا اوج کمال کوٴی ملول نہ ہو، کوٴی خستہ حال نہ ہو
خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کےلیے حیات جرم نہ ہو، زندگی وبال نہ ہو خدا کرے کہ میری ارض پاک پر اترے وہ فصل گل ، جسے اندیشہ زوال نہ ہو

ضروری تو نہیں

میں بتا دوں تمہیں ہربات ضروری تو نہیں
آخری ہو یہ ملاقات ضروری تو نہیںجیت جانا تمہیں دشوار نہیں لگتا تھا
آج بھی ہوگی مجھے مات ضروری تو نہیںآدمی فہم و ذکاء سے ہے مزین لیکن
بند ہو جائے خرافات ضروری تو نہیںدل کی راہوں پہ کڑا پہرا ہے خوش فہمی کا
مجھ سے کھیلیں میرے جذبات ضروری تو نہیںامتحاں گاہ سے تو جاتے ہیں سبھی خوش ہوکر
ٹھیک ہوں سب کے جوابات ضروری تو نہیںممتحن میں تو تیرے نام سے لرزاں تھی مگر
تیرے تیکھے ہوں سوالات ضروری تو نہیںمجھ کو انسان کی قدریں بھی بہت بھاتی ہیں
بیش قیمت ہوں جمادات ضروری تو نہیںیوں تو زر اور زمیں بھی ہیں مگر عورت ہو
باعث وجہ فسادات ضروری تو نہیںہر نئے سال کی آمد پر یہ کیوں سوچتی ہوں
اب بدل جائیں گے حالات ضروری تو نہیں[پروین شاکر]